44

برطانوی ارکان پارلیمنٹ کے بعد رائل نیوی میں بھی جنسی اسکینڈلز کا انکشاف

 لندن: نیوکلیئر ہتھیاروں سے لیس برطانوی بحریہ کی آبدوز پر تعینات رائل نیوی کے اہلکاروں کے ڈرگ ٹیسٹ مثبت آنے پر انہیں نوکری سے نکال دیا گیا۔ 
میڈیا رپورٹس کے مطابق برطانوی ارکان پارلیمنٹ کے خواتین کو جنسی ہراساں کرنے کے انکشاف کے بعد رائل نیوی کے اہلکاروں کا جنسی اسکینڈل اور منشیات استعمال کرنے کا بھانڈہ پھوٹ گیا جس کے بعد نیوکلیئر ہتھیاروں سے لیس برطانوی بحریہ کی آبدوزکو پارٹی بوٹ بنانے والوں کی شامت آگئی۔
یہ خبر بھی پڑھیں: برطانوی اراکین پارلیمنٹ کے خواتین پر جنسی حملے
جنسی اسکینڈل اور منشیات کے استعمال میں ملوث برطانوی بحریہ کے 9 اہلکاروں کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے انہیں نوکری سے خارج کردیا گیا جب کہ لیفٹیننٹ کمانڈر مائیکل سیل اور لیفٹیننٹ حناہ لچفیلڈ کو جنسی روابط پر نوکری سے نکالا گیا اور ایک اہلکار کو اپنی منگیتر سے ملنے کے لیے آبدوز چھوڑ کر بغیر چھٹی برطانیہ لوٹنے پر سزا دی گئی۔

ڈسپلن کی خلاف ورزی کے واقعات منظر عام پر آنے کے بعد برطانوی آبدوزوں پر تعینات تمام اہلکاروں کا ڈرگ ٹیسٹ لینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ رائل نیوی کے ترجمان کا کہنا ہے کہ رائل نیوی کے جنسی اسکینڈل اور منشیات میں ملوث اہلکاروں کو کسی صورت معاف نہیں کیا جائے گا اور جو اہلکار یا افسر ڈسپلن کی خلاف ورزی کا مرتکب پایا گیا اس کے خلاف ضابطے کے تحت سخت کارروائی کی جائے گی۔
The post برطانوی ارکان پارلیمنٹ کے بعد رائل نیوی میں بھی جنسی اسکینڈلز کا انکشاف appeared first on ایکسپریس اردو.